1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. آپس میں قطع رحمی نہ کرو، یقینا" اللہ تمہارا نگہبان ہے۔یتیموں کا مال لوٹاؤ، اُن کے اچھے مال کو بُرے مال سے تبدیل نہ کرو ۔( القرآن)

  3. شرک کے بعد سب سے بڑا جرم والدین سے سرکشی ہے۔( رسول اللہ ﷺ)

  4. اگر تم نے ہر حال میں خوش رہنے کا فن سیکھ لیا ہے تو یقین کرو کہ تم نے زندگی کا سب سے بڑا فن سیکھ لیا ہے۔(خلیل جبران)

ہماری آنکھ میں دو پل کی جو خماری تھی

'میری شاعری' میں موضوعات آغاز کردہ از سیدعلی رضوی, ‏مئی 31, 2019۔

  1. سیدعلی رضوی

    سیدعلی رضوی یونہی ہمسفر

    ہماری آنکھ میں دو پل کی جو خماری تھی
    ادھاری تھی! تمہیں دیکھ کر اتار ی تھی

    ہمارے شانوں پہ دن بوجھ تھا گھرانے کا
    سفر میں شام کٹی رات بے قراری تھی

    گلی کے کتے کو چھوٹا سا سایہ مل گیا تھا
    نصیب مجنوں!وہی تپتی ہوئی خواری تھی

    خلوص نام کا پنچھی تمہارے پاس نہ تھا
    دغا تھا جھوٹ تھا تم میں فریب کاری تھی

    تمہارے بعد نئے خواب کی تلاش میں تھے
    ہماری پلکوں پہ وہ ایک رات بھاری تھی

    اتارنے میں مری عمر صرف ہوگئی ہے
    وہ دل لگی کی جو چھوٹی سی اک ادھاری تھی

    ہماری جان گھلی جارہی تھی کیا یوں ہی؟
    بدن میں جاری وہی رسم جاں نثاری تھی

    ابو لویزا علی
     

اس صفحے کو مشتہر کریں