1. This site uses cookies. By continuing to use this site, you are agreeing to our use of cookies. Learn More.
  2. آپس میں قطع رحمی نہ کرو، یقینا" اللہ تمہارا نگہبان ہے۔یتیموں کا مال لوٹاؤ، اُن کے اچھے مال کو بُرے مال سے تبدیل نہ کرو ۔( القرآن)

  3. شرک کے بعد سب سے بڑا جرم والدین سے سرکشی ہے۔( رسول اللہ ﷺ)

  4. اگر تم نے ہر حال میں خوش رہنے کا فن سیکھ لیا ہے تو یقین کرو کہ تم نے زندگی کا سب سے بڑا فن سیکھ لیا ہے۔(خلیل جبران)

گردوں کے فیل ہونے کے اسباب

'طب و صحت' میں موضوعات آغاز کردہ از عمراعظم, ‏مارچ 11, 2016۔

  1. عمراعظم

    عمراعظم یونہی ایڈیٹر Staff Member

    گردوں کے امراض کے عالمی دن 10 مارچ کے حوالے سے ایک معلوماتی تحریر

    اﷲ سبحان تعالیٰ نے انسان کو دو گردوں سے نوازا ہے ۔یہ اصل میں غدود ہوتے ہیں پسلیوں کے نیچے، پیٹ کی طرف، کمرمیں دائیں اور بائیں طرف واقع ہوتے ہیں ۔گردہ11 سینٹی میٹر لمبا،کم و بیش7 سینٹی میٹر چوڑا اور 2 یا 3 سینٹی میٹر موٹا ہوتا ہے ۔ہر گردہ میں 10 لاکھ سے زائد نالی دار غدود،نیفران،یا فلٹر(جھلی) ہوتے ہیں ،گردوں میں ایک اندازے کے مطابق 24 گھنٹوں کے دوران 1500 لیٹر خون گزرتا ہے ۔گردوں کا کام جسم سے فاسد ،نقصان دہ،ضرورت سے زائد مادوں کو خارج کرنا ہے ۔گردے جسم میں پانی اور نمکیات کا توازن برقرار رکھتے ہیں ،مثلاََجسم میں کیلشیم ،پوٹاشیم ا ور فاسفورس کی مقدار کے علاوہ پانی اور دیگر نمکیات وغیرہ کا ایک حد تک جسم میں رہنا ضروری ہوتا ہے اس کی کمی و بیشی سے بہت امراض جنم لیتے ہیں ،انسان زندہ نہیں رہ سکتا ،گردوں کا کام ان مادوں ،نمکیات اور پانی میں توازن قائم رکھنا ہے ۔گردے جسم کے لیے ایسے بہت سے مفید ہارمون پیدا کرتے ہیں ،اگر یہ ہارمون جسم میں کم ہو جائیں تو خون کی کمی کی بیماری پیدا ہو جاتی ہے ۔

    وجوہا ت !
    گردے فیل ہونے کی بہت سی وجوہا ت ہیں جن میں چند اہم درج ذیل ہیں ۔گردے کی جھلی کی سوزش،جھلی فلٹر یا نیفران کی ایک طرف فاسد مادے ہوتے ہیں دوسری طرف شفاف مادے جھلی کا کام فاسد مادوں کو فلٹرکرنا ہے ،یہ جھلی اگر کام نہ کرے ، کسی وجہ سے خراب ہو جائے تو اس کے ساتھ والی جھلیاں بھی خراب ہونا شروع ہو جاتیں ہیں ,جس سے گردہ کام کرنا چھوڑ دیتا ہے ۔اس سے پیشاپ کے اندرچربی یا خون آنا شروع ہو جاتاہے گردہ فیل ہونے کی سب سے زیادہ وجہ جھلی کی سوزش ہی بنتی ہے ۔دوسری وجہ شوگر اور ہائی بلڈ پریشر ہے ،اگر شوگر کا مرض ہو تو اس کے عموماََ10 تا 15سال کی مدت کے بعد گردوں کی خرابی کا شکار ہو جاتا ہے ۔اس لیے شوگر کے مریضوں کو بہت احتیاط کرنی چاہیے اور شوگر کنٹرول رکھنے کی ہر ممکن کوشش کرنی چاہیے ۔ اسی طرح بلڈ پریشر کی زیادتی کی وجہ سے بھی گردے خراب ہو جاتے ہیں ،بلڈ پریشر کے مریضوں کو اپنا بلڈ پریشر کنٹرول رکھنا بے حد ضروری ہے ایسا نہ کرنے سے گردوں کے ساتھ ساتھ دل کا دورہ اور فالج بھی ہو سکتا ہے ۔

    موسم گرما میں جسم کو پانی کی زیادہ ضرورت ہوتی ہے ،کم پانی پینے سے جسم میں پانی کی کمی ہو جاتی ہے اور موسم سرما میں سردی کی وجہ سے کم پانی پیا جاتا ہے ،جس سے جسم میں پانی کی کمی ہو جاتی ہے جو گردوں میں پتھری کا سبب بنتا ہے ،یہ پتھری پیشاب کے ذریعہ خارج نہیں ہو سکتی ،گرودوں کی جھلی میں زخم بنتے ہیں ،جو سوزش کا باعث بن جاتے ہیں جو رفتہ رفتہ گردوں کے فیل ہونے کی طرف لے جاتے ہیں ۔یعنی پانی کی کمی گردوں کے فیل ہونے کا تیسرا بڑا سبب ہے ۔جھلی کی سوزش ،شوگر،بلڈ پریشر،پانی کی کمی وغیرہ دیکھا جائے تو یہ سب پانی کی کمی کی وجہ سے ہوتا ہے علاوہ ازیں پانی کا صاف نہ ہونا بھی اس میں شامل ہے

    علامات!
    اگر کسی کو درج ذیل علامات میں سے کوئی علامت محسوس ہو تو اسے گردوں کے اسپیشلسٹ ڈاکٹر سے اپنا چیک اپ لازمی کروا لینا چاہیے ۔کھانے کی خواہش کا ختم ہو جانا ،یاداشت کی کمزوری ،متلی اور قے کا آنا ،چڑچراپن،تھکاوٹ کا محسوس ہونا ،چہرے کا رنگ پیلا ہونا ،خشک جلد،رات کو بار بار پیشاب آنا اور پیشاب میں رکاوٹ وغیرہ کا ہونا ،شوگر کا مرض ہونا،بلڈ پریشر کی کمی یا زیادتی کا ہونا وغیرہ

    دردہ گردہ میں آدمی ایسے تڑپتا ہے جیسے مچھلی بناں پانی کے جب ایسا کسی کو درد ہو تو گردہ کے مقام پر فوراََ گرم پانی سے ٹکور کریں ،مولی کا نمک چٹائیں ، تمباکو کو ابال کر نیم گرم مقام درد پر باندھ دیں اور ڈاکٹر کے پاس مریض کو لے جائیں خیال رہے نیم حکیم کے پاس نہیں ۔الٹراساونڈ کروائیں ۔پھر ڈاکٹر کی ہدایات کے مطابق عمل کریں ۔

    پرہیز!
    ایسی تمام غذائیں جن میں فولاد زیادہ پایا جاتا ہے ان سے پرہیز کریں مثلاََ گوشت،چاول،مکئی،وغیرہ اس کے علاوہ سگریٹ نوشی ،کولاکے مشروبات ،شراب نوشی،وغیرہ سے پرہیز کریں ۔موٹاپا،زیادہ دیر تک بیٹھے رہنا،ورزش نہ کرنے والے افراد پر دیگر امراض کی طرح گردوں کے فیل ہونے کے چانس زیادہ ہوتے ہیں ۔اس لیے صبح دو گلاس تازہ اور صاف پانی پینا ،ہلکی پھلکی ورزش کرنا،دن میں بھی پانی پینا ،کھانا کھانے کے فوراََبعد پانی نہ پینا چاہیے ،رات کو سونے سے گھنٹا بھر پہلے دو گلاس پانی پینا چاہیے ،قبض نہ ہونے دیں ،اسی طرح دیگر حفظان صحت کے اصولوں پر عمل کرنے سے بہت سی امراض سے بچا جا سکتا ہے۔مختصر صاف پانی کا زیادہ استعمال،ہر قسم کے نشہ سے پرہیز ،متوازن غذا،موٹاپے پر کنٹرول کرنے سے کافی حد تک اس مرض سے بچا جا سکتا ہے ۔

    علاج!
    یہ بات بہت قابل توجہ ہے کہ جب تک گردے 80 یا 90 فیصد تک تباہ نہ ہو چکے ہوں اس سے پہلے مریض کو اس کا علم ہی نہیں ہوتا وہ اپنا روز مرہ کا کام کرتا رہتا ہے ،ایک گردہ ناکارہ بھی ہو جائے تو بھی دوسرا کام کرتا رہتا ہے ،اسی طرح یہ بات بھی توجہ چاہتی ہے کہ جب گردے ایک بار مکمل ناکارہ ہو جائیں تو کوئی دوائی یا علاج اس کو صحیح حالت میں نہیں لا سکتا ۔اس کا علاج پیوند کاری ہی ہے ۔

    گردوں کی بیماری کا علاج اس کی اقسام اور سٹیج کے مطابق کیا جاتا ہے ۔عام طور پر 50 فیصد گردوں کے فیل ہونے کا سبب شوگر،بلڈ پریشر،گردوں کا انفیکشن وغیرہ بنتا ہے، اگر ان کا علاج کیا جائے تو اس سے گردوں کو مزید خراب ہونے سے بچایا جا سکتا ہے ۔گردوں میں پتھری ہو تو اس کا علاج شعاعوں سے ،آپریشن سے ممکن ہے ،لیکن مکمل طور پر گردوں کے فیل ہونے کی صورت میں گردوں کی پیوندکاری ہی اس کا علاج ہے، جس میں گردہ دینے والے اور لینے والے کا بلڈ گروپ ایک ہونا ضروری ہے گردہ دینے والے کاجتنا قریبی تعلق ہو گا اس کی پیوندکاری اتنی کامیاب ہو گی ۔

    عالمی دن !
    آج سے پندرہ سال قبل 2006 میں انٹرنیشنل سوسائٹی آف نیفرالوجی اورانٹرنیشنل فیڈریشن آف کڈنی فاؤنڈیشن نے گردوں کا عالمی دن منانے کی ابتدا کی تھی، دنیا میں 126 ممالک میں یہ دن مارچ کی دوسری جمعرات کو منایا جاتا ہے ۔اس سال یہ دن 10 مارچ کو منایا جا رہا ہے ۔اس دن کے حوالے سے سرکاری اور غیر سرکاری سطح پر طبی تنظیمیں، ہسپتالوں میں گردوں کی بیماریوں کے متعلق سمینارز، ورکشاپس، کانفرنسز اور واک کا اہتمام کر تی ہیں۔ اقوام متحدہ کی رپورٹ کے مطابق دنیا بھر میں50 کروڑ افرادگردے کے ا مراض میں مبتلا ہیں ،جن میں سالانہ 8 فیصدکااضافہ ہورہا ہے۔پاکستان میں ہر دسواں شخص گردوں کی بیماری کا شکار ہے ۔یعنی پاکستان میں 2 کروڑکے قریب افراد گردے کے مختلف امراض میں مبتلا ہیں۔
    ( از ، اختر سردار کاسو وال)
     
    تجمل حسین، زبیر اور بینا نے اسے پسند کیا ہے۔
  2. بینا

    بینا مدیر Staff Member

    اچھی معلوماتی تحریر ہے ۔
    اس کے علاج میں پیوندکاری کے علاوہ ایک عارضی اور سستا علاج ڈائیلسس کا طریقہء کار بھی ہے۔
    پیوندکاری ایک مہنگا اور پیچیدہ طریقہء علاج ہے، ہر شخص اس کو افورڈ نہیں کرسکتا۔
     
    عمراعظم نے اسے پسند کیا ہے۔
  3. عمراعظم

    عمراعظم یونہی ایڈیٹر Staff Member

    اضافی معلومات فراہم کرنے کا شکریہ محترمہ @بینا
    البتہ میری معلومات کے مطابق اس عارضے(گردوں کے فیل ہو جانے) کا آخری حل پیوند کاری ہی ہے۔اگر اس سلسلے میں آپ کے پاس مزید معلوموت ہوں تو شیئر ضرور کیجیئے۔شکریہ
     
    Last edited: ‏مارچ 13, 2016
  4. زبیر

    زبیر منتظم Staff Member

    بہت معلوماتی آرٹیکل شائع کیا ہے @عمراعظم بھائی۔
    اور درج بالا اقتباس تو حقیقت میں مجھے ڈرا رہا ہے۔:hu
     
  5. عمراعظم

    عمراعظم یونہی ایڈیٹر Staff Member

    @زبیر بھائی ۔۔۔ دراصل ہم سب کسی نہ کسی طرح ،کسی نہ کسی عارضے میں مبتلا ہیں،جو ہماری مایوسی اور خوف کا باعث بنتے ہیں۔ کسی کو صحت کے مسائل ہیں ،کسی کو معاشی،تو کسی کو معاشرتی ،کسی کو گھریلو،خاندانی اور ذہنی مسائل کا سامنا ہے تو کسی کو ان کی پیداوار نفسیاتی مسائل کا ۔ یہ تمام ہمیں مایوسی اور خوف کی جانب دھکیلتے ہیں۔۔۔ یہاں ہمیں چند بنیادی اعمال اور تقویت کی اشد ضرورت ہوتی ہے۔ اس میں سب سے پہلے ہمیں اپنے مسائل کو سمجھنے اور ان کا بہتر حل نکالنے کی کوشش اور درست اور تجربہ کار ہمدرد یا ڈاکٹر کی ضرورت ہوتی ہے۔
    آپ جس بات سے ڈر رہے ہیں وہ حقیقی صرف اُسی صورت میں ہو سکتا ہے جب آپ اپنے علاج کو پوری طرح جاری نہ رکھ رہے ہوں نیز اس سلسلے میں ڈاکٹر کی تجویز کردہ کسرتی عمل انجام نہ دے رہے ہوں ۔
    میں اپنی اب تک کی زندگی میں اوپر بیان کردہ کئی مسائل سے دوچار رہا ہوں۔الحمدللہ میرے رب نے مجھ پر خصوصی کرم فرمایا اور میں ان سب کے چنگل سے نکلتا رہا۔ آپ جس عارضے کا شکار ہیں ،میں اس سے بھی دوچار رہا ہوں۔بر وقت ادویات کے ساتھ ڈاکٹر کے بتائی ہوئی روزانہ کم از کم پانچ کیلو میٹر کی واک کو میں نے اپنا معمول بنا لیا تھا۔اور یہ اس صورت میں جاری رہا جب مجھے صبح نمازِ فجر کے فورا" بعد ناشتہ سے فارغ ہو کر تقریبا" ستر کلو میٹر کی ڈرائیو کر کے اپنی ڈیوٹی پر پہنچتا تھا ،یہ فاصلہ طے کرنے میں ٹریفک کی روانی کی وجہ سے،مجھے ڈیڑھ سے دو گھنٹےلگتے تھے،واپسی میں اکثر مغرب کی نماز کا وقت ہو جاتا تھا۔اس کے باوجود تقریبا" پانچ کیلو میٹر کی واک ضرور کرتا تھا۔ اللہ کے فضل سے میں اس عارضے سے نجات پانے میں کامیاب رہا۔ اللہ کا شکر ہے کہ میں اب تک کسی مستقل عارضے میں مبتلا نہیں ہوں۔کل کے بارے میں اللہ ہی بہتر جانتا ہے۔ میں اب بھی روزانہ کم از کم آدھ گھنٹہ اس مقصد کے لئے مخصوص واکنگ ٹریک پر واک ضرور کرتا ہوں۔کبھی کبھار کا ناغہ صرف کسی مجبوری کی وجہ سے ہوتا ہے۔
    مندرجہ بالا تحریر کا اصل مقصد آپ کو اور دیگر پڑھنے والوں کو اپنی صحت کا خیال رکھنے کی ترغیب دینا ہے۔اللہ آپ سب کو اپنی حفظ وامان میں رکھے۔آمین
     
    Last edited: ‏مارچ 18, 2016
    زبیر نے اسے پسند کیا ہے۔
  6. زبیر

    زبیر منتظم Staff Member

    ماشاء اللہ @عمراعظم بھائی۔
    میں پہلے بھی آپ کی کچھ باتوں پر عمل کرنے کی کوشش کر رہا ہوں ، جیسا آپ نے ایک بار کہا تھا کہ نہانے کے بعد پانی پیا کریں ،یہ کام بلاناغہ ہوتا ہے۔ نماز کی پابندی میں جو کوتاہی ہو جاتی ہے اس پر بھی اللہ تعالیٰ کے فضل سے کنٹرول ہو گیا ہے۔ واک کے لئے تو نہیں جاتا لیکن 20 منٹ تک ہلکی پھلکی ورزش ضرور کرتا ہوں۔
    میرے سارے ٹیسٹ ٹھیک تھے۔۔ کولیسٹرو ل وغیرہ کا کوئی مسئلہ نہیں ،نمک بھی بے حد کم کر دیا ہے ۔ لہسن کھانا شروع کیا تھا لیکن اس کا معدے پر برا اثر پڑتا تھا اور گلے میں لگاتار خراش کی وجہ سے بہت کھانسی بھی اس لئے اس کو جاری رکھنا محال لگتا ہے۔
    انار کا جوس بھی اسی غرض سے پیتا ہوں کہ بلڈ پریشر کو کنٹرول کرنے کے لئے کافی فائدہ مند ہے۔
     
    عمراعظم نے اسے پسند کیا ہے۔
  7. عمراعظم

    عمراعظم یونہی ایڈیٹر Staff Member

    اللہ آپ صحتِ کاملہ و عاجلہ سے نوازے آمین۔
     
    زبیر اور تجمل حسین .نے اسے پسند کیا ہے۔

اس صفحے کو مشتہر کریں